28

ای سی آئی نے عام اِنتخابات 2019 ء پر ایٹلس جاری کیا

نئی دہلی /18؍ جون :چیف الیکشن کمشنر سشیل چندر نے الیکشن کمشنر راجیو کمار اور الیکشن کمشنر اَنوپ چندر پانڈے کے ساتھ مل کر 15؍ جون 2021ء کو ’’ عام اِنتخابات 2019 ۔ ایک ایٹلس ‘‘ جاری کیا ۔ سشیل چندر نے اِس کے لئے اَفسران کی سراہنا کی ۔ایٹلس میں یاد گار واقعے کے تمام اعداد و شمار شامل ہیں ۔ اِس میں 42 موضوعاتی نقشے اور 90 ٹیبلز ہیں جن میں اِنتخابات کے مختلف پہلوئوں کو پیش کیا گیا ہے ۔ ایٹلس میں ہندوستانی اِنتخابات سے متعلق دِلچسپ حقائق ، کہانیاں اور قانونی دفعات بھی موجود ہیں۔پہلے عام اِنتخابات 1951-52کے بعد سے کمیشن اِنتخابی اعداد و شمار کی تالیف شائع کر تا رہا ہے جس میں بیان اور اعداد و شمار کی کتابوں کی شکل میں ہے ۔ 2019ء میں ہونے والے 17 ویں عام اِنتخابات اِنسانی تاریخ کی سب سے بڑی جمہوری مشق تھی جس میں ہندوستان کے 32لاکھ مربع کلومیٹر علاقے میں پھیلے 10.378 لاکھ پولنگ سٹیشنوں پر 61.468 کروڑ رائے دہندگان نے اپنی حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ہندوستانی اِنتخابات میں اِنتخابی اعداد و شمار بنیادی طور پر انتخابی رجسٹریشن کے اَفسران کے تحت انتخابی فہرست کرنے کے دوران اور ریٹرننگ افسران کے ذریعے انتخابات کے انعقاد کے عمل میں بھی جمع کئے جاتے ہیں۔اِنتخابی عمل کے اِختتام کے بعد ہندوستان کا الیکشن کمیشن یہ اِنتخابی اعداد و شمار جمع کرکے تالیف ، ریکارڈ اور بازی کے مقاصد کے لئے مختلف رپورٹوں کو تیار کرتا ہے۔اکتوبر 2019 ء میں کمیشن نے 543 پارلیمانی حلقوں کے ریٹرننگ افسران کے ذریعے دستیاب انتخابی اعداد و شمار کی بنیاد پر شماریاتی رپورٹوں کو جاری کیا۔ اس ایٹلس میں جو نقشے اور جدول رکھے گئے ہیں ان میں اس معلومات کی نشاندہی کی گئی ہے اور وہ ملک کے انتخابی تنوع کی بہتر تفہیم اور تعریف کے لئے فراہم کرتے ہیں۔ اعداد و شمار کو سیاق و سباق دینے کے علاوہ یہ تفصیلی نقشے مختلف سطحوں پر اِنتخابی نمونوں کو ظاہر کرتے ہیں اور ساتھ ہی اس کی مقامی اور دنیاوی ترتیبات کو بھی ظاہر کرتے ہیں۔ انتخابی اعداد و شمار کو بہتر انداز میں پیش کرنے اور اس کی نمائندگی کرنے کے مقصد کے ساتھ یہ ایٹلس ایک معلوماتی اور وضاحتی دستاویز ہے جو ہندوستانی انتخابی عمل کی باریکی کو سامنے رکھتا ہے اور قارئین کو رُجحانات اور تبدیلیوں کا تجزیہ کرنے کا اہل بناتا ہے۔ایٹلس میں نمایاں خصوصیات میں 23 ریاستوں اوریونین ٹیریٹریوںکے اعداد و شمار جہاں مردوں کی رائے دہندگی کے تناسب سے خواتین کی ووٹنگ کا تناسب زیادہ تھا۔ دوسرے پیرامیٹروں کے درمیان اِنتخابی اُمیدواروں اور سیاسی جماعتوں کی کارکردگی کے لحاظ سے سب سے بڑے اور چھوٹے پارلیمانی حلقہ کے بارے میں معلومات درج ہے۔ایٹلس نے مختلف زُمروں میں اور الیکٹورس ڈیٹا جیسے متناسب چارٹس اور مختلف عمر کے زُمرے میں اِنتخاب کنندہ کے ذریعہ الیکٹرٹروں کے اعداد و شمار کو دکھایا ہے۔ 2019ء کے عام اِنتخابات میں ہندوستانی اِنتخابات کی تاریخ میں سب سے کم صنفی فرق دیکھا گیا۔ اِنتخابی صنفی تناسب جو 1971ء کے بعد سے مثبت رُجحان کا مظاہرہ کررہا ہے وہ 2019 کے عام اِنتخابات میں 926 تھا۔ایٹلس 2014ء اور 2019ء کے عام اِنتخابات کے دوران مختلف ریاستوں میں فی پولنگ سٹیشن کے اوسط تعداد کی موازنہ بھی کرتا ہے۔ ہندوستان کے الیکشن کمیشن نے اروناچل پردیش میں فی پولنگ سٹیشن (365) میں سب سے کم ووٹروں کی تعداد کے ساتھ عام اِنتخابات 2019 ء میں 10 لاکھ سے زیادہ پولنگ سٹیشن قائم کئے۔مختلف دیگر اقسام میں سے ایٹلس 1951ء کے بعد سے عام انتخابات میں حصہ لینے والے اُمیدواروں کی تعداد کا موازنہ کرتا ہے۔ 2019 ء کے عام اِنتخابات میں ملک بھر میں 11,692 کاغذاتِ نامزدگیوں میں سے کاغذ واپس لینے اور مسترد ہونے کے بعد 8,054 اہل مقابلہ اُمیدوار تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں