نومنتخب ایس ایم سی میئر جنید متو اپنی پارٹی میں شامل

0
118

موصوف کا سیاسی میدان میں ایک تابناک مستقبل :الطاف بخاری
سرینگر؍27،نومبر ؍کے این ایس ؍ جنید عظیم متو جوکہ گذشتہ دنوں سرینگر میونسپل کارپوریشن کے میئر منتخب ہوئے ہیں، نے جمعہ کے روز اپنی پارٹی میں شمولیت اختیار کی۔ پارٹی صدر دفتر لال چوک سرینگر میں منعقدہ پروگرام میں صدر سعید محمد الطاف بخاری، صوبائی صدر کشمیر محمد اشرف میر اور ضلع صدر سرینگر نور محمد شیخ نے اُن کا والہانہ استقبال کیا۔ بخاری نے کہاکہ متو کو شہرِ سرینگر کے لوگوں کی خدمت کرنے کے لئے پارٹی کیڈر اور اِس کے عہدیداران کی طرف سے ہر ممکن تعاون ملے گا۔انہوں نے عہد کیاکہ اپنی پارٹی ہمیشہ پورے جموں وکشمری بالخصوص دونوں شہروں سرینگر اور جموں کی یکساں ترقی کے لئے کام کریے گی۔ بخاری نے کہا’’مجھے اُمید ہے کہ جنید متو کویڈ19کے پھیلنے سے روکنے کے لئے موثر اقدامات اُٹھائیں گے اور شہر ِ سرینگر کے سبھی وارڈوں اور حلقوں کی ہمہ جہت ترقی کا نیا دور شروع کریں گے، خاص کر شہرِ خاص کی عظمت ِ رفتہ کی بحالی پر توجہ مرکوز کی جائے گی‘‘۔انہوں نے کہاکہ اپنی پاپارٹی کرپشن کے سخت خلاف ہے اور اِس بات کو یقینی بنائے گی کہ سرینگر کے وارڈوں اور حلقوں کے درمیان ترقیاتی محاز پر کوئی امتیاز نہ ہو۔انہوں نے کہاکہ انہیں خوشی ہے کہ جنید متو اپنی پارٹی میں شامل ہوئے اور اُن کا سیاسی میدان میں ایک تابناک مستقبل ہے۔ انہوں نے کہاکہ آنے والے دنوں میں متعدد کارپوریٹرز پارٹی میں شامل ہورہے ہیں جن کے لئے اعلیحدہ شاندار تقریب منعقد کی جائے گی۔ اُن پر اعتماد اور بھروسہ جتانے کے لئے اپنی پارٹی قیادت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے متو نے کہاکہ خطہ کی روایتی سیاسی جماعتوں کی طرف سے اپنی جارہی سیاسی چالوں اور کچھ آنکھیں کھول دینے والے انکشافات کے بعد انہوں نے فیصلہ کیاکہ وہ اپنی پارٹی میں شامل ہوں جس کا ایجنڈا حقیقت پر مبنی ہے اور تعمیر وترقی، سماجی واقتصادی مسائل متعلق حقیقت پسندانہ رویہ اختیار کیاجارہاہے۔ انہوں نے کہا’’الطاف بخاری صاحب نہ صرف ایک بہتر انسان ہیں بلکہ دور اندیش رہنما بھی ہیں جوکہ الفاظ کی بجائے عملی اقدامات پر یقین رکھتے ہیں۔ میں دیکھ سکتا ہوں کہ اپنی پارٹی ایک ایسا سیاسی پلیٹ فارم ہے جو حقیقت پسندانہ اپروچ اور زمینی سطح پر کچھ کرنے پر یقین رکھتی ہے‘‘۔انہوں نے مزید کہاکہ نام نہاد قد آور سیاسی لیڈران کی غیر حقیقی اور بازارو چالوں کا سچائی سے دفاع کرنے کی ضرورت ہے اور اِس ضمن میں اپنی پارٹی کی کاؤشوں نے اُنہیں متاثر کیا۔سابقہ منتخب حکومت میں بطور کابینہ وزیر اُن کی کارکردگی انتہائی متاثر کن رہی جس کے تمام سیاسی مخالفین بھی معترف رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here